Monday, 4 December 2017

مرحوم

 !مرحوم 

مرحوم زندگی کی حراست میں مر گیا 
سخت دل تھا اتنا_ نفاست سے مر گیا

وہ ایک شخص انوکھا ہی سخی تھا کہ جو 
اپنے ہی دل کی _ سخاوت سے مر گیا

حاصل کچھ نا ادھر سے آیا، نا ادھر سے 
اپنے قبیلے سے کی ہوئی بغاوت میں مر گیا

لوگ کہا کرتے تھے صاف دل ہے بہت 
لوگ کہتے ہیں _عداوت سے مر گیا

سرور بن مظفر

Friday, 20 January 2017

کبھی آؤ نا آؤ تو چائے پیتے ہیں


کبھی آؤ نا
پھر سے پیتے ہیں چائے
جنوری کے سرد موسم میں
کسی یخ بستہ لمحے میں
کسی اداس شام کو
کبھی آؤ نا 
پھر سے پیتے ہیں چائے
کسی بھی بہانے سے
روٹھنے منانے سے
بے وجہ لڑائی پر
آؤ تو چائے پیتے ہیں...

از سرور بن مظفر




Sunday, 8 January 2017

Bhuli Bisri Hui Yaadon Mein Kasak Hai Kitni


Bhuli Bisri Hui Yaadon Mein Kasak Hai Kitni


Bhuli bisri hui yaadoN mein kasak hai kitni
Doobti shaam ke atraaf chamak hai kitni
Manzar E gul to bus ek pal k liye Thahra tha
Aati jaati hui saansoN mein mahak hai kitni
Gir ke Too-Ta nahi shayed woh kisi pat-thar per
Uski aawaz mein taabindaa khanak hai kitni
Apni har baat mein woh bhi hai hasinoN jaisa
Us saraapay mein magar nok plak hai kitni
Jaate mausam ne jinhein chhoR diya hai tanha
Mujh mein un TooT-te pattoN ki jhalak hai kitni
(Zubair Rizvi)

Bahut Kathin Tha Nibhaana, Nibaah Main Ne Kiya





Bahut Kathin Tha Nibhaana, Nibaah Main Ne Kiya

Bahut kaThin tha nibhaana, nibaah main ne kiya
Khud apne aap ko yaani tabaah main ne kiya
Mila tha jab K mujhe tu sufaid-umri mein
Tujhe bhi pyaar magar be-panaah main ne kiya
MaiN tere jism ke ander tha baat karte hue
Tujhe pata bhi nahi jo gunaah main ne kiya
Jo kamsukhan the miyaN wo bhi daad dene lage
Kisi ke she’r pe jab waah waah main ne kiya
Tu mere jurm ki tamheed E be-gunaahi dekh
Koi wakeel na koi gawaah main ne kiya
Tumhare ishq pe woh naaz hai mujhe jaanaaN
K is Ghuroor mein sar kaj-kulaah main ne kiya
(Mehshar Afridi)

Bayaan E Haal Mufassal Nahi Hua Ab Tak


Bayaan E haal mufassal nahi hua ab tak
Jo mas’ala tha wohi hal nahi hua ab tak
Nahi raha kabhi main teri dastaras se door
Meri nazar se too ojhal nahi hua ab tak
BichhaR ke tujh se ye lagta tha tut jaunga
Khuda ka shukr hai paagal nahi hua ab tak
Jalaye rakkha hai main ne bhi ek chiragh E umeed
Tumhara dar bhi muqaffal nahi hua ab tak
Mujhe tarash raha hai ye kaun barson se
Mera wajood mukammal nahi hua ab tak
Daraaz dast E tamanna nahi kiya main ne
Karam tumhara musalsal nahi hua ab tak

(Jahangir Nayaab)


بیانِ    حال    مفصّل   نہیں   ہوا   اب   تک
 جو  مسئلہ تھا وہی  حل نہیں  ہوا اب   تک
نہیں رہا کبھی میں تیری دسترس سے  دور
 مِری  نظر سے  تُو اوجھل نہیں  ہوا اب  تک
بچھڑ کے تجھ سے یہ لگتا تھا ٹوٹ جاؤں گا
 خدا  کا  شکر   ہے  پاگل   نہیں  ہوا  اب  تک
جلائے رکھا ہے میں نے  بھی  اک چراغِ امید
 تمہارا   در  بھی  مقفّل  نہیں   ہوا   اب  تک
مجھے  تراش  رہا  ہے  یہ  کون  برسوں  سے
 مِرا    وجود    مکمل    نہیں     ہوا  اب  تک
دراز    دستِ    تمنّا    نہیں    کیا   میں   نے
 کرم    تمہارا    مسلسل  نہیں ہوا   اب   تک
————– جہانگیرنایاب

کہنے کو مرے ساتھ دغا بھی نہیں کرتا




کہنے کو مرے ساتھ دغا بھی نہیں کرتا
وہ شخص مگر وعدہ وفا بھی نہیں کرتا

دریا کے کناروں کی طرح ساتھ ہے میرے
ملتا وہ نہیں ہے تو جدا بھی نہیں کرتا

آئینے وہ احساس کے سب توڑ چکا ہے
کس حال میں ہوں میں یہ پتہ بھی نہیں کرتا

پوجا ہے تجھے جیسے مرے دل نے مری جاں 
ایسے تو کوئی شخص دعا بھی نہیں کرتا

تاعمر غزل اس کی ہی بس ہو کے رہی میں 
بھولے جو مرا نام لیا بھی نہیں کرتا

تلاش



دل کو تیری ہی تلاش رہتی ہے 

تم یاد کرو نہ کرو مجهے تیری ہی یاد رہتی ہے

تمہیں نہ دیکهوں تو سکون کسی پل آتا
میری نظریں تم ہی کو ڈهونڈتے رہتے ہے

جانے میری آنکهوں کو کیا نشہ ہے اک بار تم کو دیکه لوں
تو سارا دن سکون سے گز جاتا ہے 

نہ دیکهوں تو کسی پل چین نہیں آتا
دل کو تیری ہی تلاش رہتی ہے

قائم بهرم رہے یوں سدا نہ دل ہو کبهی دل سے جدا
.. یہی دعا لب پے تنہا~ کے رہتی ہے